MUHABBAT KA SODAGAR BY SAMINA SYAAL

مجھے کچھ ایسی بھی غزلیں پسند ہیں
مگر میں ان کو سنا نہیں سکتی
کچھ ایسی نظمیں پسند ہیں
مگر وہ یاد نہیں رہی مجھے
میرے خواب ادھورے ہیں کچھ
میں نے خواب تو بہت دیکھے تھے
مگر منزل پہ پہنچ نہ سکی
نیند ٹوٹ گئ خواب پورا ہونے سے ہی پہلے
کبھی نہ مل سکے وہ خواب میں بھی
تو پھر کیسے مل پائیں گے اصل زندگی میں
تم مجھے اچھے لگے پہلی نظر میں تو کیا وہ دھوکہ تھا میری نظر کا
دوسری میں قریب تھے میری سانسوں کے
اور تیسری نظر میں
تم نے مجھے کھو دیا بس
اور اب مجھے تم جہاں نظر آؤ گے
وہاں تمیں۔ میں کہاں نظر آؤں گی

ONLINE READ:

PDF DOWNLOAD LINK:

MUHABBAT KA SODAGAR COMPLETE

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *