MAN MUSAFIR BY QANITA KHADIJA

’’کوئی بات نہیں بھروسہ بھی جیت لوں گا ۔۔۔۔۔۔ ایک بار پناہوں میں تو آجاؤں‘‘ عبداللہ نے اسکے کان میں سرگوشی کی تو ہالا کے گال دہک اٹھے
’’اوہوں ۔۔۔ اوہوں۔۔۔۔۔ میں یہی ہوں ابھی‘‘ نیلم گلا کھنکھار کر بولی
’’پھر تو آپ کو چاہیے کہ آپ فورا واپس چلی جائے۔۔۔۔۔۔ اور ہمیں اکیلے کچھ موقع دے‘‘ عبداللہ ہالا کو آنکھ مارتے بولا
’’بدتمیز‘‘ ہالا عبداللہ کو دھکا دیتے وہاں سے بھاگی تو عبداللہ کا قہقہ گونج اٹھا

ONLINE READ:

PDF DOWNLOAD BUTTON:

MAN MUSAFIR COMPLETE

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *